0

سپریم کورٹ کا مونال سمیت نیشنل پارک میں تمام ریسٹورنٹ بند کرنے کا حکم

سپریم کورٹ آف پاکستان نے مونال سمیت اسلام آباد کے نیشنل پارک کے تمام ریسٹورنٹس کو بند کرنے کا حکم دے دیا۔سپریم کورٹ میں مارگلہ نیشنل پارک میں واقع ریسٹورنٹ کیس کی سماعت ہوئی۔سپریم کورٹ نے اپنے حکم میں کہا ہے کہ نیشنل پارک میں قائم ریسٹورنٹس کو 3 ماہ میں مکمل طور پر ختم کیا جائے۔سپریم کورٹ نے اپنے حکم میں کہا کہ اگر نیشنل پارک کے باہر کہیں بھی لیز کی ضرورت ہو تو متاثرہ ریستوراں کو ترجیح دی جائے۔حکم نامے میں سپریم کورٹ آف پاکستان نے کہا ہے کہ نیشنل پارک میں تجارتی سرگرمیوں کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔مونال ریسٹورنٹ کا رضاکارانہ دہائی کی منتقلی کے لیے ریستوراں کا اعتمادمونال ریسٹورنٹ نے 3 ماہ میں ریسٹورنٹ کو رضاکارانہ طور پر منتقل کرنے کی یقین دہانی کرائی۔سپریم کورٹ نے نیشنل پارک کے علاقے کے دیگر تمام ریسٹورنٹس کو بھی 3 ماہ کے اندر منتقل کرنے کا حکم دیا۔سماعت کے دوران چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ آپ بتائیں ریسٹورنٹ کب تک منتقل کر سکتے ہیں؟ اگر آپ رضاکارانہ طور پر منتقلی نہیں کرتے ہیں، تو ہم سیل کرنے کا حکم دیں گے۔مونال ریسٹورنٹ کے وکیل نے کہا کہ ہمیں 4 ماہ کا وقت دیا جائے۔ چیف جسٹس نے مونال ریسٹورنٹ کے وکیل کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ ہم آپ کو 3 ماہ کا وقت دے رہے ہیں۔ ہمارا مقصد نیشنل پارک کے تحفظ کو یقینی بنانا ہے۔ اس حقیقت کے علاوہ کہ دیگر تمام قائم شدہ ریستورانوں کو غیر ضروری نوٹس پیش کیے جاتے ہیں، ہمارے کیس کا فوکس صرف نیشنل پارک کی حدود پر ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں